News

Bad nazri aur ishq-e-mijazi ki tabahkariaan

AT004-front

بد نظری و عشقِ مجازی کی تباہ کاریاں اور ان کا علاج

حضرت مولانا شاہ حکیم محمد اختر صاحب نور اللہ مرقدہ

بدنظری یعنی نامحرموں کو شہوت کی نظر سے دیکھنا اور اس سے لذت حاصل کرنا اس قدر غلیظ اور ناپاک بیماری ہے جو انسان کی زندگی سے پاکیزگی ختم کرکے اسے نجاست اور غلاظت کے کنویں میں پھینک دیتی ہے۔ بدنظری شہوت کے تمام گناہوں کی پہلی منزل ہے، باقی سارے گناہ اسی راستے سے ہوکر گزرتے ہیں۔ بد نظری کرنے والے کے تین برے القابات ہیں: ۱)اللہ تعالیٰ کا نافرمان ۲) نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا نافرمان ۳) ملعون۔ اسی لیے اللہ تعالیٰ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے پہلے ہی قدم پر انسان کو تنبیہ فرما دی اور نگاہوں کو نیچی رکھنے کا حکم دیا۔

شیخ العرب والعجم عارف باللہ حضرت اقدس مولانا شاہ حکیم محمد اختر صاحب رحمۃ اللہ علیہ کو اللہ تعالیٰ نے مجدد غضِ بصر بنایا تھا۔ آپ نےاپنے رسالے ’’بدنظری اورعشقِ مجازی کی تباہ کاریاں اور اُن کا علاج‘‘میں بدنظری سے ہونے والے ایسے نقصانات بیان کیے ہیں جن کے اثرات اور تباہ کاریاں تحریر کے دائرے میں نہیں لائی جاسکتیں۔اسی لیے انہوں نے نہایت درد بھرے دل سے نظر کی حفاظت کے مضامین نئے نئے اور منفرد انداز سے بیان فرمائے ہیں تاکہ امت زندگی میں زہر گھولنے والی اس بیماری سے نجات حاصل کرکے عافیت اور چین بھری زندگی گزار سکے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Free WordPress Themes - Download High-quality Templates